Issue# 205

15th Feb 2011

Old Archives

اس شمارے کی اہم  خبریں

 

ترتیب: شین جیم

Email: sheenjeem@gmail.com

پنجاب کے دیہات میں اردو
 

پردہ۔۔۔


جب کسی نے مسکرا کر مجھ پہ اِک سُٹیا سلام
درفٹے منہ" کہہ کے میں پردے دے پچھّے چھُپ گئی "
 


عذر گناہ۔۔۔


سوں رب دی مام دین! میں کل رات تیرے کو
ملتی ضرور پر مجھے چیتا نہیں رہا
 

 

ڈاکو دلدار۔۔۔


اللہ میں قربان جاؤں، اپنے ڈاکو یار کے
جس نے ڈولی وِچ بٹھایا مینوں ٹھڈّے مار کے
 

چچی اور بھتیجی۔۔۔


لگا ہے میز تے کھانا، تکلّف کر نہ، آ چاچی
مرا کہنا نہیں مندی تے جا کھسماں نوں کھا چاچی

دو بھائی۔۔۔


میں ماروں گا، منع کر اِس کو بے بے
جمالا مجھ پہ تھوکیں سوٹتا ہے
 

۔۔۔راجہ مہدی علی خاں
 

سکندر نامہ

ٹرخا کے سکندر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
سنسان کیا گھر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
اب درجنوں کپ چائے، اُنہیں کون پلائے
چکمہ دیا شوہر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
ڈھابے میں کھڑے رہتے ہیں، اپنانا پڑا ہے
فٹ پاتھ کے کلچر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
خوش ذائقہ کچھڑی کا مزا بھول گئے ہیں
اب کوسیں مقدّر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
بے شغلی و تنہائی کے جھنجھٹ میں پھنسا کر
اِک مست قلندر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
اب کون کہے اُن کو خدا حافظ و ناصر
وہ جائیں جو دفتر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
پورس کی طرح ہار گئے جنگ سکندر
اب روئیں مقدّر کو ۔۔۔ غزالہ گئیں میکے
 

۔۔۔رضا نقوی واہی